جہلم

جہلم شہر سمیت ضلع بھر میں عطائی ڈاکٹرز نے بھی ایم بی بی ایس کا روپ دھار لیا

جہلم: جہلم شہر سمیت ضلع بھر میں انڈر میٹرک عطائی ڈاکٹرزکی بھرمار ہو چکی ہے ، سی ای او ہیلتھ ڈی ایچ او ، ڈی ڈی ایچ او سمیت دیگر ذمہ داران نے اس حوالے سے مکمل خاموشی اختیار کر رکھی ہے جس کیوجہ سے ضلع بھر میں جگہ جگہ میٹرنٹی ہوم ، ذچہ بچہ سنٹرز اور عطائی ڈاکٹرز کے کلینکوں نے لوٹ مار مچارکھی ہے۔
گلی محلوں میں قائم ہوئے والے منی ہسپتال اور میڈیکل سٹورز پر جنسی و نشے کی ادویات بآسانی دستیاب ہونے کیوجہ سے نوجوان نسل تباہی کے دہانے پر اور انڈر میٹرک عطائی ڈاکٹرز سرجن بن کر سرعام شہریوں کے آپریشن کرتے دکھائی دیتے ہیں۔
گلی محلوں کے عطائی ڈاکٹرز مرض کی تشخیص کئے بغیر شہریوں کو ناقص وغیر معیاری ادویات تھماکر ہزاروں روپے وصول کر لیتے ہیں جس سے مزید بیماری کی شدت میں اضافہ ہو جاتا ہے اور مریض ٹھیک ہونے کی بجائے مزید موذی مرض میں مبتلا ہو کر آہستہ آہستہ موت کے منہ میں چلا جاتا ہے۔
اتنا کچھ ہونے کے باوجود اور بار بار خبریں شائع ہونے کے بعد بھی تاحال ان ٹرینڈ انڈر میٹرک عطائی ڈاکٹرز کے خلاف محکمہ صحت کی ضلعی انتظامیہ کارروائی نہیں کر رہی جس کیوجہ سے شہریوں کی بڑی تعداد موت کے منہ میں جاچکی ہے۔
شہریوں نے وزیر اعلیٰ پنجاب عثمان بزدار ، چیف سیکرٹری پنجاب ، صوبائی وزیر صحت ڈاکٹر یاسمین راشد ، کمشنر راولپنڈی، ڈپٹی کمشنر سے نوٹس لینے کا مطالبہ کیاہے ۔

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button