پنڈدادنخان

پنڈدادنخان پوسٹ آفس کھنڈرات میں تبدیل، سہولیات کا فقدان، عملہ کی کمی، عوام پریشان

پنڈدادنخان: پوسٹ آفس کھنڈرات کا منظر پیش کر رہا ہے 25 ہزار پینشنروں اور عوام کے بیٹھنے کے لیے کوئی فرنیچر نہیں، سہولیات کا فقدان، عملہ کی کمی، سیاست دانوں اور محکمہ کی نااہلی کا منہ بولتا ثبوت ہے، چھوٹے سے چھوٹے کام کے لیے پینشنروں کو جہلم جانا پڑتا ہے۔

تفصیلات کے مطابق پوسٹ آفس پنڈدادن خان جو کہ تحصیل بھر کا بڑا پوسٹ آفس ہے اور اس کے ساتھ 16 پوسٹ آفس منسلک ہیں پوسٹ آفس پنڈدادن خان کی بلڈنگ خستہ حالت اور کھنڈرات کا منظر پیش کرتی ہے 2006 کے بعد محکمہ نے پوسٹ آفس کی بلڈنگ کو بے یارومددگار چھوڑ دیا اور اس کی حالت زار پر نظر ڈالنا بھی گوارہ نہ کیا۔

علاوہ ازیں تحصیل بھر سے ہر ماہ تقریبا 25 ہزار پینشنر ہر ماہ اپنی پینشن وصول کرنے آتے ہیں جن میں زیادہ تعدادبوڑھے افراد کی ہوتی ہے ان کے علاوہ روزانہ آنے والے کسٹمربھی شامل ہیں کے لیے بیٹھنے کے لیے کوئی فرنیچر نہیں جو دو کرسیاں پڑی ہیں وہ بھی ٹوٹی ہوئی ہیںاس کے علاوہ پوسٹ آفس میں آنے والوں کے لیے سہولیات کے کمی کے علاوہ عملہ بھی بہت کم ہے جس کی وجہ سے شہریوں کو ایک چھوٹے سے کام کے لیے کئی کئی گھنٹوں انتظار کرنا پڑتا ہے۔

حیران کن بات یہ ہے کہ اس جدید طور میں بھی یہ پوسٹ آفس کمپیوٹر اورUPS کی سہولیات سے محروم ہے توجہ طلب بات یہ ہے کہ چھوٹے کام کے لیے پینشنروں کو GPO آفس جہلم کے کئی کئی چکر لکانے پڑتے ہیں جس کی وجہ سے ان ضعیف العمرلوگوں کو کافی مشکلات کا سامنا کرنا پڑتا ہے محکمہ سے اپیل ہے کہ دوسری تحصیلوں کی طرح اس تحصیل کو بھی پینشنروں کو درپیش مسائل کے حل کے لیے پنڈدادن خان آفس کو ختیارات دئیے جائیں تاکہ اہل علاقہ کو جہلم کے دھکے نہ کھانے پڑے ۔

پنڈدادن خان کے رفاہی سماجی مذہبی حلقوں اور عوام دوست گروپ نے محکمہ پوسٹ آفس کہ اعلی حکام سے اپیل کی ہے کہ پنڈدادن خان پوسٹ آفس کے مسائل کو جلد سے جلد حل کر کے عوام کو ان مشکلات سے نجات دلائی جائے ۔

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button