جہلم میں بجلی اور ٹیلیفون کے کھمبے تجاوزات کیساتھ ساتھ دکانداروں کیلئے نعمت کا سبب بننے لگے

0

جہلم: اندرون شہر کے بازاروں میں بغیر منصوبہ بندی لگائے جانیوالے بجلی اور ٹیلیفون کے کھمبے تجاوزات کیساتھ ساتھ دکانداروں کیلئے نعمت کا سبب بننے لگے جبکہ یہ کھمبے عوام کیلئے مشکلات کا موجب بن رہے ہیں۔

متعدد تاجروں نے کھمبے اپنی دکانوں کے آگے لگوانے کیلئے وفاقی اداروں کے افسران سے سفارشیں کرواکر نصب کروا رکھے ہیں جس کے بعد واپڈا اور محکمہ ٹیلی فون کے عملہ نے اپنے اپنے کھمبوں کو ایسی جگہوں پر نصب کررکھے ہیں جو دکانداروں کو تجاوزات کروانے کا موجب بنے ہوئے ہیں۔

مین بازار، نیا بازار، کناری بازار ، دلہن بازار، صرافہ بازار، چوک اہلحدیث سمیت دیگر بازاروں میں ان کھمبوں کی آڑ لیکر دکانداروں نے دکانیں باہر سجا ئی ہوئی ہیں بعض دکانداروں نے تو کھمبوں پر بھی اپنا سامان فروخت کرنے کیلئے لٹکانا شروع کررکھا ہے۔

شہریوں کا کہنا ہے کہ جب سرکاری ادارے کھمبے نصب کرنے کی منصوبہ بندی کرتے ہیں تو وہ موثر منصوبہ بندی نہیں کرتے بلکہ سیاست دانوں اور تاجروں کی خوشنودی حاصل کرنے کے لئے جی حضوری کیوجہ سے بغیر منصوبہ بندی کے دائیں بائیں کھمبے نصب کر دیتے ہیں جو کہ دکانداروں کے سہولت جبکہ صارفین کے لئے زہنی کوفت کاسبب بنتے ہیں ۔

شہریوں نے آئیسکو سرکل جہلم کے سی ای او ، محکمہ ٹیلیفون کے جنرل منیجر سے مطالبہ کیا ہے کہ اندرون شہر کے بازاروں میں بغیر منصوبہ بندی کے لگائے کھمبوں کو ہٹا کر منصوبہ بندی کے تحت کھمبوں کو نصب کیا جائے جبکہ بجلی کی تاروں کو اندرون شہر کے بازاروں میں زیر زمین بچھایا جائے تاکہ تاروں کے جھنجھٹ سے چھٹکارا حاصل کیا جا سکے اور تجاوزات کا خاتمہ ہو سکے ۔

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.