جہلم

لائیو سٹاک کی غفلت کے باعث ضلع جہلم میں غیرقانونی ذبح خانوں کی تعداد میں غیر معمولی اضافہ

جہلم: لائیو سٹاک کی غفلت کے باعث ضلع بھر میں غیر قانونی ذبح خانوں کی تعداد میں غیر معمولی اضافہ ، بیمار ، لاغر، جانوروں کو ذبح کیا جانے لگا، شہری روزانہ ہزاروں من مضر صحت گوشت استعمال کرنے پر مجبور ، شہری حلقوں کا چیف جسٹس آف پاکستان ، ڈپٹی کمشنر/ ایڈمنسٹریٹر میونسپل کارپوریشن سے نوٹس لینے کا مطالبہ۔

تفصیلات کے مطابق ضلع بھر میں غیر قانونی سلاٹرنگ کا خاتمہ نہ کیا جا سکا ، غیر قانونی ذبح خانوں میں مادہ جانوربھی ذبح کئے جارہے ہیں ، جن کا گوشت انسانی صحت کے لئے انتہائی نقصان دہ ہے ، شہر بھر میں زیادہ تر قصابوں نے جانور ذبح کرنے کے لئے اپنے گھروں میں انتظامات کر رکھے ہیں جبکہ نواحی علاقوں میں جانوروں کو سرعام سڑکوں پر یا کہیں بھی کھلی جگہ پر ذبح کردیا جاتا ہے۔

شہری حلقوں کا کہنا ہے کہ جانوروں کی غیر قانونی سلاٹرنگ کے لئے قصابوں کو متعلقہ ویٹرنری افسران کی آشیر باد حاصل ہے ، جانور ذبح کرنے کے بعد بعض قصاب مہر بھی خود لگا لیتے ہیں جو ان کو متعلقہ عملے کی جانب سے غیر قانونی طور پر مہیا کی گئی ہوتی ہے ، زیادہ تر غیر قانونی ذبح خانے روہتاس روڈ، کالا گجراں ، بلال ٹاؤن،چونترہ ، کھرالہ، گھرمالہ سمیت دیگر درجنوں دیہی علاقوں میں واقع ہیں۔

حکومت پنجاب نے مادہ جانوروں سمیت دیگر جانوروں کو سڑکوں کے کنارے اور سرعام ذبح کرنے پر سخت پابندی عائد کر رکھی ہے لیکن اس کے باوجود شہر کے درجنوں علاقوں میں قصاب بلا خوف و خطر مضر صحت اور لاغر جانوروں کو ذبح کرکے گوشت شہریوں میں فروخت کر رہے ہیں ، جنہیں ضلعی انتظامیہ کی سرپرستی حاصل ہے۔

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button