دینہاہم خبریں

چوروں کا سرغنہ لندن بیٹھا ہوا ہے اور 40 چور یہاں چھوڑ گیا ہے۔ چوہدری فواد حسین

وفاقی وزیر سائنس و ٹیکنالوجی چوہدری فواد حسین نے کہا ہے کہ جو لوگ 26ویں آئینی ترمیم کی مخالفت کر رہے ہیں ان کی ڈوریں لندن اور کراچی سے ہلائی جاتی ہیں‘ اپوزیشن کے ایوان میں موجود اراکین کٹھ پتلیاں ہیں‘ وہ سپیکر سے معاہدہ کرنے کے بعد اس سے ہٹ جاتے ہیں‘ عمران خان نے اپنے منشور کے مطابق ترمیم لاکر عوام سے کیا وعدہ پورا کیا ہے۔

جمعرات کو قومی اسمبلی میں بل پر اظہار خیال کرتے ہوئے چوہدری فواد حسین نے کہا کہ گزشتہ روز سپیکر چیمبر میں طے ہوا کہ اپوزیشن کے دو لوگ بات کریں گے ایک حکومت کی طرف سے بات کرے گا، واپس ایوان میں آنے پر لندن اور رائے ونڈ سے فون کالز موصول ہوئیں کہ آپ کو کیسے جرات ہوئی کہ ایسا معاہدہ کریں۔ مرتضیٰ جاوید اور سجاد اعوان اپنے استعفے دے کر مکر گئے۔

انہوں نے کہا کہ شازیہ مری نے چور چور کے پوسٹر بنا کر (ن) لیگ والوں کو تھما دیئے۔ یہ قائد سے کارکن تک چوروں کی جماعت ہے۔ 26ویں آئینی ترمیم پاکستان کے آئین کے ڈھانچے کے لئے ہے۔ ان کو کیا علم کہ آئین کیا ہے۔ کچھ سرگودھا میں ٹرک چلاتے تھے‘ وہ اس ایوان میں آئے ہیں۔

چوہدری فواد حسین نے کہا کہ ایک رکن نے اپنا جوتا یہاں لہرایا‘ کسی کے رکشے ہیں‘ کسی کے ٹرک ہیں‘ ان کو اس آئینی ترمیم کا علم نہیں ہے۔ ان کی ڈوریں ایوان میں نہیں ہیں کسی کی لندن اور کسی کی کراچی میں ہیں۔ ان پتلیوں کی تاریں غیر منتخب لوگ ہلاتے ہیں۔ اس ترمیم پر بحث اس لئے ضروری ہے کہ اس میں ووٹ کی خفیہ رائے دہی سمجھنے کی ضرورت ہے۔ جدید پارلیمان میں خفیہ رائے دہی برقرار ہے۔ یہ ماضی میں ملک بدری کے لئے استعمال ہوتا تھا۔

انہوں نے کہا کہ اس سے قبل امریکہ میں اس پر مباحثہ ہوا اور 125 سال بعد بل آیا۔ یہاں یہ بل منظور نہیں ہونے دیا گیا۔ یہ یہاں بھی ملینیئر کلب برقرار رکھنا چاہتے ہیں۔ عمران خان شفافیت لانا چاہتے ہیں اس لئے یہ بل لائے ہیں۔ گزشتہ سینٹ الیکشن میں 20 ایم پی ایز کو ہم نے جماعت سے نکالا۔ کسی اور لیڈر میں یہ جرات نہیں تھی۔ صادق سنجرانی کے حق میں ووٹ دینے والے ایک رکن کے خلاف کوئی کارروائی نہیں کرسکے۔

فواد چوہدری نے کہا کہ سارا بکاؤ مال نواز شریف اور زرداری کے ساتھ ہے۔ ترمیم یہ ہے کہ ووٹ ڈالنے والے کا ہر ایک کو علم ہوگا کہ کس کو ووٹ دیا ہے۔ جس طریقے سے اس کی مخالفت کی گئی ہے یہ لوگ پیسے کے خلاف کھڑے نہیں ہوتے۔ ان کی لیڈر شپ اب جس پست حالت ہے‘ اتنی تاریخ میں نہیں آئی۔ یہ معاہدے کرکے ایک کال پر ڈھیر ہو جاتے ہیں۔

وفاقی وزیر نے کہا کہ ہم نے اپنا کیس پاکستان کے عوام کے سامنے رکھا ہے کہ عمران خان نے انتخابات میں شفافیت لانے کی کوشش کی۔ ہمیشہ کی طرح پاکستان کے مستقبل میں رکاوٹ یہی اپوزیشن ہے۔ اس ملک میں وفاداریاں خریدنے کی بنیاد نواز شریف نے رکھی۔ میثاق جمہوریت میں بھی یہ طے پایا تھا کہ سینٹ الیکشن اوپن ہوگا۔ یہ بے نظیر کے نام پر ووٹ لیتے ہیں یہ اپنا نام بدل کر بھٹو بن رہے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ پاکستان میں چھانگا مانگا کی سیاست نواز شریف نے شروع کی۔ ان لوگوں نے اسامہ بن لادن سے دس ملین ڈالر لئے‘ اس سے دنیا ڈرتی تھی لیکن یہ اس کے پیسے بھی کھا گئے۔ جے یو آئی کے سربراہ کا گھر اور دفتر لیبیا سے لئے گئے پیسے سے بنا ہے۔ یہ کبھی ایسی ترمیم کی حمایت نہیں کریں گے۔

چوہدری فواد حسین نے کہا کہ اپوزیشن جتنا مرضی شور مچا لے عمران خان نے چوروں کو این آر او نہیں دینا، یہ اپنے ہمراہ اب ’’چور چور‘‘ کے پوسٹر بھی لے آئے ہیں لیکن قوم کو ان کی شکلوں سے ہی معلوم ہے کہ یہ سرٹیفائیڈ چور ہیں‘ ’’پاکستان ڈاکو موومنٹ‘‘ آئین پاکستان کی کاپی سے ڈیسک بجا کر اس کی توہین کر رہی ہے۔

جمعرات کو قومی اسمبلی میں وقفہ سوالات کے دوران چوہدری فواد حسین نے کہا کہ شازیہ مری مسلم لیگ (ن) کے ارکان کو چور چور کے پوسٹر دے رہی ہیں۔ ’’پاکستان ڈاکو موومنٹ‘‘ کے ارکان نے آئین پاکستان کی کتاب کو ڈیسک بجانے کے لئے استعمال کیا ہے۔ اس سے آئین کی توہین ہوتی ہے، جو کام سڑک پر ہوں یہ یہاں نہ کریں۔

وفاقی وزیر نے کہا کہ گزشتہ روز ان کے ارکان نے کہا کہ دستور میں ترمیم میں سنجیدگی ہو‘ یہ صرف اپنے کیسز ختم کرنے اور این آر او کے لئے کر رہے ہیں۔ عمران خان نے ان کو نہیں چھوڑنا، عمران خان نے بدلنا نہیں ان چوروں کو ان کی چوری کی سزا مل کر رہے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ چیزوں کے ساتھ قانون سازوں کا بھی معیار ہونا چاہیے۔ چوروں کا سرغنہ لندن بیٹھا ہوا ہے اور 40 چور یہاں چھوڑ گیا ہے۔

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button