دینہ

جب انسان اپنی چاہتوں اور اپنی انا میں آتے ہیں تو پھر نا اتفاقی پیدا ہوتی ہے۔ امیر عبدالقدیر اعوان

دینہ: اپنے ہر عمل کو فقط رضائے باری تعالیٰ کے لیے کیا جائے ،کیونکہ ہر عمل کی قبولیت نہاں خانہ دل سے اُٹھنے والی نیت پر ہے ،ہر لمحہ اپنی ذات کو دیکھنا ہو گا کہ کہیں اپنی بڑائی میں تو نہیں پڑ گیا ،اس نیت کو خالص کرنے کے لیے اپنے قلب کو درست کریںاس کی اصلاح کے لیے ذکر قلبی اکسیر دوا ہے ،یہی وہ برکات نبوت ہیں جو کہ حضرت قاسم فیوضات امیر محمد اکرم اعوان ؒ نے پوری دنیا کے کونے کونے تک پہنچائی اور اپنی آخری سانس تک اس پر کاربند رہے۔
ا ن خیالات کا اظہار امیر عبدالقدیر اعوان شیخ سلسلہ نقشبندیہ اویسیہ و سربراہ تنظیم الاخوان پاکستان نے مولانا محمد اکرم اعوان ؒ کی دوسری برسی کے موقع پر ہزاروں کی تعداد میں آئے خواتین و حضرات سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔ انہوں نے کہا کہ حضرت ؒ نے اپنے مضبوط ارادوں اور پوری طاقت کے ساتھ اس نعمت عظمیٰ کو ہر ایک تک پہنچایا اور اپنے مربی شیخ مولانا اللہ یار خاں ؒ کی امانت کو احسن طریقے سے پوری دنیا میں پھیلا دیا۔
انہوں نے کہا کہ آپ ؒ نے تین تفاسیر بیان فرمائیں قرآن مجید کا آسان فہم ترجمہ فرمایا،تصوف کے موضوع پر ہزاروں بیان آپ کے موجود ہیں،شعری مجموعے لکھے ،الفلاح فاؤنڈیشن پاکستا ن کی بنیاد رکھی ،الاخوان کی بنیاد،صقارہ ایجوکیشن سسٹم کے بانی یہ تمام شعبے آپ ؒ نے شروع فرمائے جو کہ الحمد للہ اسی طرح جاری و ساری ہیں،ہم ان کے ہر شعبے کو اپنی جان سے زیادہ عزیز جانتے ہیںاور اپنی آخری سانس تک جاری رکھیں گے۔
انہوں نے مزید کہا کہ اسلام کا ہر ہر حکم جو قرآن کریم میں موجود ہے آپ ﷺ کے بتائے ہوئے اصول ہیںجب ہم اپنی چاہتوں اور اپنی انا میں آتے ہیں تو پھر نا اتفاقی پیدا ہوتی ہے اور ایک دوسرے سے دوری ہو جاتی ہے جس کی آج پوری قوم شکار ہے ،بیان کے آخر پر آپ نے حضرت جی ؒ کی یاد میں ایک خوبصورت تحریر بھی پڑھ کر سنائی۔
آخر میں انہوں نے ملکی سلامتی اور بقا کی اجتماعی دعا فرمائی اور ایک ایک فرد کو اسلام اور وطن عزیز کے لیے اپنا مثبت کردار ادا کرنے کو کہا ۔

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button