جلالپور شریف

تھانہ جلالپور شریف کے سامنے قبضہ مافیا کا راج، ناجائز تجاوزات نے شہریوں کی زندگیاں اجیرن بنا دی

تھانہ جلالپور شریف کے سامنے قبضہ مافیا کا راج ہے، بجری سریا اور ناجائز تجاوزات نے شہریوں کی زندگیاں اجیرن بنا دی ہیں۔مین روڈپرغیر قانونی کھوکھے، ریڑیاں، رکشہ سٹینڈ، اینٹیں ، ریت ، مٹی اور بجری کے ڈھیر، خواتین ، طالبات اور مریض شدید پریشانی کا شکارہیں۔ شہریوں کی متعدد شکایات کے باوجود ایکسین ہائی وئے ،ایس ڈی او ہائی وے ،اسسٹنٹ کمشنر پنڈدادنخان اور ایس ایچ او تھانہ جلالپور شریف کی عدم توجہی سے جلالپور شریف کے مین سٹاپ پر ناجائز تجاوزات کی بھرمار ہے۔

تھانہ جلالپور شریف کے سامنے قبضہ مافیا کا راج ہر وقت ریت بجری ،سریا کے ڈھیر لگے ہوئے رہتے ہیں ۔اسی طرح سڑک پر کھوکھے، ریڑیاں، رکشہ سٹینڈاورروڈ پر جگہ جگہ ریت ،بجری کے ڈھیربھی ہمیشہ دکھائی دیتے ہیں۔ تھانہ جلالپور شریف کے افسران ا ور عملہ کی مجرمانہ غفلت ، ملی بھگت، پیسوں کی چمک یا دیدہ دلیری کہ انہوں نے مین بازار میں پھل ،سبزی فروشوں اور سلائی کڑھائی کی مشینیں رکھوا کر 10فٹ کے بازار کو 2 فٹ کی گلی میں تبدیل کر کے رکھ دیا ہے۔

سکول و کالج کے اوقات میں منچلے موٹر سائیکلوں پر طالبات کو تنگ کرتے نظر آتے ہیں جن کے خلاف تھانہ جلالپور شریف کا عملہ کارروائی کرنے سے گریزاں ہے اسی طرح تھانہ جلالپور شریف کے عملہ کی موٹر سائیکل بغیر نمبر پلیٹ یا پھر پولیس کی نمبرفینسی پلیٹ کے ساتھ روڈ پر نظر آتی ہیں کیا قانون صرف عام آدمی کیلئے ہی ہے؟۔

اہلیان علاقہ کا مطالبہ ہے کہ سکول، کالج کے چھٹی کے اوقات میںجلالپور شریف کے سٹاپ پر پنجاب پولیس یا ٹریفک پولیس کے اہلکار تعینات کیے جائیں جس سے کم عمر رکشہ اور موٹرسائیکلوں سواروں کی تعداد میں کمی واقع ہواورروڈ پر چلنے والی پبلک ٹرانسپورٹ میں اوور لوڈنگ کی وجہ سے ہونے والے حادثات سے بچا جا سکے۔ افسران کی عدم توجہی اور نا اہلی کی وجہ سے آئے روزمسافروں کا ناجائز تجاوزات کی وجہ سے جھگڑا معمول بن چکا ہے اور یہ قبضہ مافیا دن بدن مزید طاقتور بنتا جا رہا ہے۔

سیاسی و سماجی حلقوں نے افسران کی مجرمانہ غفلت اور خاموشی پر وزیر اعظم پاکستان، وزیراعلیٰ پنجاب، چیف جسٹس آف پنجاب، آئی جی پنجاب، ریجنل پولیس آفیسر راولپنڈی، ڈسٹرکٹ پولیس آفیسر جہلم، ڈسٹرکٹ کوآرڈینیٹرجہلم سے فوری کارروائی کا مطالبہ کیا ہے۔

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button