ڈسٹرکٹ ہیلتھ اتھارٹیز میں ادویات کی خریداری کا عمل تعطل کا شکار، مراکز صحت میں ادویات کی قلت پیدا ہو گئی

0

جہلم: محکمہ پرائمری اینڈ سیکنڈری ہیلتھ کیئر کی غفلت کے باعث ڈسٹرکٹ ہیلتھ اتھارٹیز میں ادویات کی خریداری کا عمل تعطل کا شکار ، خریداری کے حوالے سے رکھی گئیں شرائط پر فارماکمپنیوں نے حکم امتناعی حاصل کر لیا ،ادویات خریداری میں التواء مراکز صحت پر بیماریوں کی ادویات کی شدید قلت پیدا ہو گئی ، بخار، نزلہ ، ذکام ، کھانسی اور گلے کے انفیکشن کی اینٹی بائیوٹیک سیرپ نہ ہونے سے مریض ادویات بازاروں سے خریدنے پر مجبور۔

محکمہ پرائمری ہیلتھ کی جانب سے گزشتہ مالی سال میں خریدی گئی ادویات کا اسٹاک بھی ختم ہونے کے قریب ہے جس کی وجہ سے سرکاری ڈسپنسریوں اور مراکز صحت میں مریضوں کو شدید مشکلات کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے۔

پنجاب حکومت نے ڈسٹرکٹ ہیلتھ اتھارٹیز کو ادویات خریدنے کی ہدایات کی جن میں کچھ شرائط پر فارما انڈسٹری کی جانب سے عدالت سے حکم امتناعی حاصل کر لیا گیا جس کے باعث ادویات کی خریداری کا عمل مزید التواء کا شکارہے کیونکہ رواں مالی سال کے 5 ماہ گزر چکے ہیں ابھی تک خریداری کا عمل التواء کا شکار ہے ۔

سرکاری مراکز صحت پر موسمی بیماریوں خاص طور پر نزلہ زکام بخار گلے اور چھاتی کے انفیکشن کے لئے اینٹی بائیوٹیک اور کھانسی کے سیرپ کی قلت کا سامنا ہے، موسمی بیماریوں کی ادویات کا محکمہ پرائمری ہیلتھ کی جانب سے فراہم کیا جانے والا سٹاک بیشتر ڈسپنسریوں سے ختم ہوچکا ہے۔

ادویات کی رواں مالی سال کے دوران خریداری میں تاخیر کی وجہ سے سرکاری ڈسپنسریوں اور مراکز صحت پر آنے والے مریضوں کو ادویات کی فراہمی کا بحران مزید شدت اختیار کرتا دکھائی دے رہا ہے اس سنگین مسئلے کا تاحال کوئی حل تلاش نہیں کیا جاسکا۔

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.