کھیوڑہ شہر کے مسائل اور فواد چوہدری سے توقعات — تحریر: سلیمان شہباز

0

ضلع جہلم کا آبادی کے لحاظ سے دوسرا بڑا شہر کھیوڑہ کئی دہائیوں سے مسائل کا شکار ہے جسکی بنیادی وجہ یہاں سے منتخب ہونے والے نمائندے تھے کان نمک کے علاوہ کھیوڑہ شہر کی پہچان یہ بھی تھی کے ضلع جہلم اور خاص طور پر کھیوڑہ شہر مسلم لیگ ن کا قابل تسخیر قعلہ بھی ہے لیکن قومی الیکشن کے بعد پاکستان تحر یک انصاف نے ضلع جہلم میں کلین سویپ کیا اس کے باوجود آج بھی مسلم لیگ کے ووٹر اور کارکنوں کی کثیر تعداد موجود ہے۔

کھیوڑہ شہر اور گردونواح میں پانی جیسے بنیادی مسئلہ کے ساتھ ساتھ صحت ،تعلیم ،صفائی اور دیگر مسائل آج بھی جوں کے توں ہیں چیئرمین میونسپل کمیٹی کھیوڑہ اور انتظامیہ کی لاپروائی اور ہٹ دھرمی کے باعث ضلع جہلم کا دوسرا بڑا شہر کھیوڑہ گندگی کے ڈھیروں میں تبدیل ہو چکا ہے صفائی کا عملہ بھی غائب ہے نالے نالیوں کی صفائی نہ ہونے کی وجہ سے بارشوں کا پانی گلی محلوں میں کھڑا ہے جو کہ تا لابوںکا منظر پیش کررہا جبکہ ضلعی اور مقامی انتظامیہ روائتی بے حسی کامظاہرہ برقرار رکھے ہوئے ہے۔

مون سون بارشوں کا سلسلہ جاری ہے جس کی وجہ سے نکاسی آب کے ساتھ ساتھ صفائی کے ناقص انتظامات کے پول بھی کھول رہا ہے نالے اور نالیوں کی صفائی نہ ہونے کے باعث بارشوں کا پانی گلی محلوں میں کھڑا رہتا ہے جبکہ صفائی کا عملہ غائب ہے شہر کے متعدد وارڈ گندگی کے ڈھیروں میں تبدیل ہو چکے ہیں جبکہ انتظامیہ فوٹو سیشن اور بیانات پر زور دیئے ہوئے ہے ہر وارڈ میں دو دن کے بعد صفائی کے دعوے دھرے کے دھرے رہ گئے ہیں ۔

سول ہسپتال کا نالہ عرصہ سے بند پڑا ہے اور گول مارکیٹ کے نالے کا گندہ پانی مین سڑک پر بہہ رہا ہے مین سڑک کھیوڑہ انتہائی ناقص میٹریل سے تعمیرکی گئی تھی جو افتتاح سے پہلے ہی ٹوٹ پھوٹ کا شکار ہوچکی تھی باقی کی کثر نالوں سے بہنے والے پانی نے نکال دی ہے کھیوڑہ سڑک پر آنے والے اخراجات کی انکوائری ہونی چاہیے اور ذمہ داران کا احتساب بھی کیا جائے۔

کھیوڑہ میونسپل کمیٹی میں شہر کی صفائی کے لیے ہیوی مشینر ی اور عملہ موجود ہے لیکن پھر بھی صفائی کے انتظامات نظر نہیں آتے اگر صفائی کا عملہ بھولے سے کسی وارڈ میں صفائی کے لیا جاتا ہے تو وہ بھی برائے نام ہوتا ہے نالیوں سے گند نکال کر گلی میں پھینک دیا جاتا ہے جو بارش کے بعد پوری گلی میں کھڑا ہو جاتا ہے زیادہ بارش ہونے کے باعث یہ ہی گندہ پانی لوگوں کے گھروں میں داخل ہو جاتا ہے جس کی وجہ سے عوام کو شدید پریشانی کا سامنا کرنا پڑتا ہے کھیوڑہ میونسپل کمیٹی کے صفائی کے ناقص انتظامات کی وجہ سے شہری ذہنی اذیت میں مبتلا ہوچکے ہیں۔

اسکے علاوہ پانی کے مسئلہ کے حل کے لیے میٹھا پتن واٹر سپلائی اور بیلہ واٹر سپلائی کے کاموں پر بہتری کے بہت دعوے کئے گئے لیکن کھیوڑہ شہر میں پانی کئی کئی ہفتوں کے بعد تھوڑی دیر کے لیے دیا جاتا ہے بعض محلوں میں تو دیا ہی نہیں جاتا لوگ آج بھی پیسوں سے پینے کا صاف پانی خرید کر استعمال کرتے ہیں کھیوڑہ شہر میں اکثریت مزدور طبقہ کی ہے لوگ اسی کشمکش میں رہتے ہیں کے وہ اپنی دیگر ضروریات پوری کریں یا پانی خرید یں ۔

منتخب قیادت کو چاہیے کہ کم از کم پچھلے دس سالوں میں پانی پر ہونے والے اخراجات کا آڈ ٹ کروا لیں تو بہت سے حقائق سامنے آ جائیں گے ۔کھیوڑہ شہر میں آئی سی آئی سوڈا ایش نے پینے کے صاف پانی کے درجنوں کنکشن عوام کے لیے دیئے ہوئے ہیں جس سے کھیوڑہ شہر کی آبادی کی اکثریت مستفید ہورہی ہے اسی طرح پی ایم ڈی سی نے بھی کھیوڑہ شہر کے لیے ایک واٹر فلٹریشن پلانٹ لگا کر دیا ہوا ہے لیکن مقامی انتظامیہ کا پانی کے مسئلہ پر کیا کردار ہے جب مقامی ادارے عوام کو پینے کا صاف پانی دے سکتے ہیں تو مقامی انتظامیہ کو بھی چاہیے کے عملی اقدامات کر کہ میٹھاپتن واٹر سپلائی کو بہتر طریقے سے فال کر کہ صاف پانی کے مسئلہ پر قابو پایا جائے بیانات اور سوشل میڈیا تشہیر سے ہٹ کر شہر کے لیے عملی طور پر کام کرنے کی ضرورت ہے۔

عوام نے اپنے غصہ اور نارضگی کا اظہار الیکشن میں کر دیا ہے اب سمجھنا اور نا سمجھنا مقامی قیادت کا مسئلہ ہے عوام اپنے مسائل کا حل چاہتے ہیں۔ کھیوڑہ شہر کے نوجوانو ں کی بڑی تعداد نے پاکستان تحریک انصاف کے ترجمان حلقہ PP27 اورNA67سے کامیاب ہونے وا لے فواد چوہدری سے بہت سی اُمیدیں لگا لی ہیں۔شہر میں اصل تبدیلی تب وجود میں آئے گی جب یہاں کی ماؤں بہنوں کے سر سے پانی کے گھڑے اتر جائیں گے اور ان کو پانی گھروں میں ہی ملے گا۔

کھیوڑہ شہر کے مسائل کا حل فواد چوہدری ہی کر سکتے ہیں اب سوال یہ ہے کہ کیا چوہدری فواد اپنی مصروفیت کے باوجود پہلے کی طرح کھیوڑہ شہر کے عوام کو وقت دیں گے عوامی رابطہ برقرار رکھتے ہوئے ان کی اُمیدوں پر پورے اتریں گے؟ کیونکہ اعلیٰ قیادت نے ان پر بہت اہم ذمہ داریاں بھی ڈالی ہوئی ہیں جن کو وہ خوش اسلوبی سے انجام دے رہے ہیں ۔پی ٹی آئی میں ان کی پوزیشن سب کے سامنے ہے اور وہ ہر وقت مرکزی قیادت کے ساتھ موجود ہوتے ہیں اس لیے ہی عوام کا یقین ہے کہ اب ان کے مسائل کے خاتمہ کا وقت بہت قریب ہے ۔

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.