سول ہسپتال جہلم میں ڈاکٹروں کی مبینہ غفلت سے ایک بچہ جاں بحق، ڈپٹی کمشنر نے نوٹس لے لیا

0

جہلم: سول ہسپتال جہلم میں ڈاکٹروں کی مبینہ غفلت سے ایک بچہ جاں بحق اور دوسرے کی حالت تشویشناک ہوگئی۔بچوں کا والد مختلف وارڈوں میں اپنے نومولودوں کے علاج کیلئے مختلف وارڈوں میں دوڑتا رہا مگر کوئی شنوائی نہ ہوسکی۔

دینہ کا رہائشی یاسر اپنے دو نامولود جڑواں بچوں کو تشویشناک حالت میں سول ہسپتال جہلم کے بچہ وارڈ میں لایا۔ بچہ وارڈ کے عملے نے علاج کرنے کے بجائے بچوں کو ایمرجنسی میں بھیج دیا۔

تاہم ایمرجنسی میں موجود ڈاکٹر نے دوبارہ بچہ وارڈ میں یہ کہہ کر بھیج دیا کہ بچوں کا علاج چائلڈ اسپیشلسٹ کی نگرانی میں بچہ وارڈ میں ہوتا ہے۔ اسی کشمکش میں ایک بچہ دم توڑ گیا جبکہ دوسرا زندگی موت کی کشمکش میں مبتلا ہے۔بچہ وارڈ میں ڈیوٹی پر موجود ڈاکٹر نے موقف دینے سے انکار کردیا ہے۔

ادھر ڈپٹی کمشنر جہلم محمد سیف انور جپہ نے سول ہسپتال جہلم میں نومولود بچے کی ہلاکت کے معاملے کی انکوائری کے لئے ایم کی سربراہی میں خصوصی کمیٹی تشکیل دی۔

میڈیکل سپرنٹنڈنٹ سول ہسپتال جہلم ڈاکٹر میاں مظہر حیات نے انکوائری رپورٹ میں بتایا کہ بچے کے والد یاسر کا تعلق دینہ شہر سے ہے جو کہ دینہ کا رہائشی ہے اس کا گھر سول ہسپتال جہلم سے 20 کلومیٹر کی مسافت پر واقعہ ہے 2 جڑواں بچے کی پیدائش اسکے گھر میں ہوئی جنکی عمر 5 ماہ یعنی 20 ہفتے ہے۔

انہوں نے بتایا کہ بچوں کی حالت غیر ہونے پر یاسر نے سول ہسپتال جہلم رجوع کیا جبکہ بدقسمتی سے ایک بچے کی ہسپتال آمد سے پہلے ہے ڈیتھ ہو چکی تھی جبکہ دوسرا بچہ انتہائی نگہد اشت وارڈ میں داخل ہے جس کا باقاعدہ علاج جاری ہے۔

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.