کھیوڑہاہم خبریں

کھیوڑہ میں70 سالوں سے آباد 120 گھر وں کے باسیوں کو ایک ہفتے کے اندراندر خالی کرنے کا نوٹس جاری

کھیوڑہ شہر میں 70 سالوں سے آباد ہونے والے شہریوں کوتحصیل انتظامیہ کی طرف سے120 گھر وں کو ایک ہفتے کے اندراندر جگہ خالی کرنے کا نوٹس جاری ،شہری متحد ہو کر پرامن احتجاجی ریلی کھیوڑہ شہر سے نکال کر اے سی آفس پنڈدادنخان جائیں گے، اے سی آفس سے انصاف نہ ملا تو دیگر اعلی احکام سے اپیل کریں گے۔

تفصیلات کے مطابق کھیوڑہ شہر میں70سالوں سے آباد ہونے والے شہریوں کوتحصیل انتظامیہ کی طرف سے120گھرانوں کو ایک ہفتے کے اندراندر جگہ خالی کرنے کا نوٹس جاری کر دئیے گئے۔ کھیوڑہ شہر میں کئی سالوں سے یہاں پر مقیم ہیں ہمارے آباؤ اجداد صدیوں سے اس شہر میں مقیم ہیں اور شہریوں نے لاکھوں کروڑوں روپے لگا کر اپنے گھر تعمیر کیے ہوئے ہیں اور بلدیہ کھیوڑہ کے ریکارڈ میں ہیں اور ہمیں مکانات نمبرز الاٹ کیے گئے ہیں۔

بلدیہ کھیوڑہ کی طرف سے ہی سرکاری سطح پر محلوں میں سڑکیں تعمیر کی گئیں ہیں اور سوئی گیس واٹرسپلائی کی لائینں بچھی ہوئی ہیں مگر افسوس کہ کئی سالوں اور کئی نسلوں سے رہائش پذیر شہریوں نے سرکاری زمین پر ناجائز قبضہ تجاوزات نہیں کی حکومت غریب عوام میں کروڑوں گھر تقسیم کرنے کی بجائے انکو اپنے جیب سے بنائے گئے مکانوں میں ہی رہنے دے۔

وجہیہ کنول ایڈووکیٹ و معروف قانون دان ملک فیصل عباس سابق چیئرمین ملک زاہد ملک ربانی و دیگر مقررین نے کہا کہ 70سالوں سے آباد ہونے والے شہریوں کو جگہ خالی کرنے کے نوٹس کینسل کیے جائیں، بلدیہ کھیوڑہ میں تمام مکانوں کا ریکارڈ موجود ہے گلی محلوں میں سرکاری طور پر سڑکیں تعمیر کی گئی اور واٹر سپلائی اور سوئی گیس کی لائنیں بچھی ہوئی ہیں اور شہریوں کو ناجائز قبضہ کا نوٹس دینا شہریوں کے ساتھ بہت بڑی زیادتی و ظلم ہے ۔

ملک عرفان اعجاز سابق امیدوار ایم پی اے نے کہا کہ عرصہ داراز سے رہنے والے شہریوں کو دئیے گئے نوٹس کی کوئی قانونی حیثیت نہیں ہے عرصہ داراز سے رہنے والے شہریوں کو شارٹ ٹائم میں نوٹس دینے کا تحصیلدار کو لیگل رائٹس نہیں ہیں۔

شہریوں نے وفاقی وزیر چوہدری فواد حسین چیف سیکرٹری پنجاب کمشنر راولپنڈی ڈی سی جہلم اسسٹنٹ کمشنر سے اپیل کرتے ہوئے کہا کہ وہ اس مسئلہ پر فوری نوٹس لیں اور جاری شدہ نوٹس فوری طور پر منسوخ کیے جائیں۔

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button