ڈومیلیسوہاوہاہم خبریں

سوہاوہ کے علاقہ تتروٹ اور حسنوٹ سے لاکھوں سال پرانے جانوروں کی مزید باقیات دریافت

سوہاوہ کے گاؤں تتروٹ اور حسنوٹ سے لاکھوں سال پرانے جانوروں کی باقیات دریافت ہوئی ہیں۔

یہ دریافت شعبہ زوالوجی، غازی یونیورسٹی، ڈیرہ غازی خان کے صدر پروفیسر ڈاکٹر خضر سمیع اللہ کے زیر نگرانی کام کرنے والے ریسرچ اسکالر رانا مہروز فضل اور علاقے کی سماجی شخصیت چوہدری عابد حسین (تتروٹ) نے لاکھوں سال پرانے جانوروں کی باقیات شوالک پہاڑوں سے دریافت کیے۔

ان باقیات میں دریائی گھوڑے، گینڈے، زرافے، گھوڑے، کارنی ور اور بووڈ فیملی جن میں بائی سن، بوس، ہرن، گائے، بھیڑ، بکریاں، وغیرہ شامل ہیں ان جانوروں کی باقیات تقریباً 72 لاکھ سال پرانی ہیں۔

رانا مہروز فضل جو کہ چائنیز اکیڈمی آف سائنسز، انسٹی ٹیوٹ آف ورٹیبریٹ پیلیونٹولوجی اور پیلیوانتھروپولوجی کے فارن ریسرچ اسکالر ہیں کا کہنا ہے کہ اس علاقے میں لاکھوں سال پہلے ماحولیات بہت کارساز تھے۔ ماحولیاتی تبدیلیوں کی وجہ سے بہت سے جانوروں کی نسلیں اس علاقے سے ناپید ہو چکی ہیں۔ اس علاقے میں بہت ہی کم جنگلی حیات باقی رہ گئی ہیں۔

انہوں نے کہا کہ گورنمنٹ اور علاقے کے لوگوں سے گزارش ہے کہ جنگلی حیاتیات کے بچاؤ کے لیے اقدامات کیے جائیں۔ اس علاقے میں ترقی یافتہ ممالک کی طرح فوسل پارک اور میوزیم بنانے کی ضرورت ہے تاکہ سیاحت کو فروغ ملے اور لوگوں کے لئے روزگار کے مواقع پیدا ہو سکیں۔

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

Back to top button