جہلم

ویٹرنری ہسپتالوں، ڈسپنسریوں میں ادویات کی فراہمی التوا کا شکار، مویشی پال پریشان

جہلم: ویٹرنری ہسپتالوں، ڈسپنسریوں میں ادویات کی فراہمی التوا کا شکار، مویشی پال پریشان، مہنگے داموں ادویات خرید کر مویشیوں کا علاج معالجہ کروانے پر مجبور، محکمہ لائیو سٹاک کی بہتری کیلئے کروڑوں روپے فراہم کیے جانے کے اعلانات کاغذی کارروائیوں تک محدود ، مویشی پال افراد علاج پر بھاری رقم خرچ کرنے پر مجبور۔
تفصیلات کے مطابق حکام کی عدم توجہی کے باعث ضلع جہلم کے ویٹرنری ہسپتالوں اور ڈسپنسریوں میں ادویات کی فراہمی التوا کا شکار ہو کر رہ گئی ہے ’ مویشی پال حضرات بازاروں سے مہنگے داموں ادویات خرید کر علاج معالجہ کرانے پر مجبورہیں۔
ضلع بھر کے بیسیوں مویشی پال افرادکا اس حوالے سے کہنا ہے کہ ہر سال بجٹ میں محکمہ لائیو سٹاک کی بہتری کیلئے کروڑوں روپے کے فنڈز مختص کیے جانے کے اعلانات تو کیے جاتے ہیں جبکہ حقیقت اس کے بر عکس ہے گزشتہ کئی ماہ سے جانوروں کے علاج معالجہ کے لئے ویٹرنری ہسپتالوں اور ڈسپنسریوں کے چکر لگا لگاکرذلیل و خوار ہورہے ہیں۔
انہوں نے کہا کہ پرائیویٹ ڈاکٹرز بھاری فیسیں وصول کرکے جانوروں کا علاج معالجہ کرتے ہیں ضلع بھر میں قائم ویٹرنری ہسپتال اور ڈسپنسریاں ادویات اور عملے کی کمی کی وجہ سے غیر فعال ہو چکی ہیں۔
کسانوں نے ڈپٹی کمشنر جہلم سے مطالبہ کیا ہے کہ ویٹرنری ہسپتالوں میں ادویات کی فراہمی اور ڈاکٹروں کی خالی آسامیوں پر ڈاکٹرز کی تعیناتی کو یقینی بنایا جائے تاکہ مویشیوں میں پانی جانے والی مہلک امراض کا خاتمہ ممکن ہو سکے ۔

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button