جہلم

جہلم میں مہنگائی عروج پر، ہر روز دکانداروں نے من مرضی کے نرخ مقرر کرنے شروع کر دئیے

جہلم: شہر اور گردونواح میں مہنگائی عروج پر، ہر روز دکانداروں نے من مرضی کے نرخ مقرر کرنے شروع کر دئیے، روز مرہ کی اشیاء خوردونوش کی قیمتیں عام آدمی کی پہنچ سے کوسوں میل دور ، شہری خود ساختہ مہنگائی اورگراں فروش مافیا کے سامنے بے بس ،پرائس کنٹرول مجسٹریٹس ٹھنڈے کمروں تک محدود ہو کر رہ گئے۔

تفصیلات کے مطابق شہر سمیت ضلع بھر میں مہنگائی ہر گزرتے دن کے ساتھ عروج پکڑ رہی ہے ، پرائس کنٹرول مجسٹریٹس گراں فروشوں کے خلاف کارروائیاں کرنے کی بجائے خاموش تماشائی کا کردار ادا کر رہے ہیں ۔

اس حوالے سے شہریوں نے اخبار نویسوں سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ ضلعی انتظامیہ نے گراں فروشوں کے خلاف کارروائیاں کرنے کا مہینہ ماہ رمضان مقرر کر رکھا ہے جبکہ 11 مہینے گراں فروشوں کو غریب ، محنت کش ، دیہاڑی دار طبقے کو لوٹ مار کرنے کے لئے دے رکھے ہیں ، شہر سمیت ضلع بھر میں دکانداروں نے جنگل کا قانون نافذ کر رکھا ہے۔

شہریوں نے کہا کہ ضلعی حکومت نے جو نرخ مقرر کر رکھے ہیں اس سے 100 گنا اضافے کے ساتھ اشیاء خوردونوش فروخت کی جارہی ہیں جبکہ گراں فروش شہریوں کو دونوں ہاتھوں سے لوٹنااپنا فرض سمجھ رہے ہیں، ضلعی حکومت نے 100 گرام روٹی کے نرخ 7 روپے مقرر کر رکھے ہیں جبکہ نان بائی اور تندور مالکان نے روٹی کی فروخت 10 روپے جبکہ نان کی قیمت 10 روپے مقرر ہے جو کہ 15 روپے میں فروخت کئے جارہے ہیں۔

شہریوں نے کہا کہ ضلعی انتظامیہ نے چینی کا نرخ مقرر کرنے کی بجائے گراں فروشوں کو کھلی چھوٹ دے رکھی ہے ، جس کیوجہ سے دکاندار 110 سے 115 فی کلو گرام کے حساب سے چینی فروخت کر رہے ہیں ، ہوٹل مالکان نے چیک اینڈ بیلنس کا نظام مفلوج ہونے کیوجہ سے کھانوں اور چائے کے نرخوں میں اضافہ کرکے من مانے نرخ وصول کئے جارہے ہیں۔

شہریوں نے وزیراعلیٰ پنجاب اور چیف سیکرٹری پنجاب سے مطالبہ کیاہے کہ ضلع جہلم میں فرض شناس ایماندار افسران کو تعینات کیا جائے تا کہ غریب سفید پوش طبقہ سے تعلق رکھنے والے افراد 2 وقت کی روٹی اپنے بچوں کو مہیا کر سکیں۔

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button