جہلم

ممنوع قرار دیئے جانے والے روڈ سٹڈز شہریوں کی گاڑیوں کے ٹائرز کی ستیاناس کا باعث بننے لگے

جہلم: اندرون شہر سمیت جی ٹی روڈ پر ممنوع قرار دیئے جانے والے روڈ سٹڈز شہریوں کی گاڑیوں کے ٹائرز کی ستیاناس کا باعث بننے لگے، این ایچ اے سمیت پراونشل ہائی وے کے افسران کی خاموشی سوالیہ نشان بن گئی ، گاڑیوں کے مالکان کا ارباب اختیار سے نوٹس لینے کا مطالبہ۔

تفصیلات کے مطابق شہر سمیت ضلع بھر کی سڑکوں پر اسپیڈ بریکر بنانے کی بجائے سڑکوں پر سٹڈز کا استعمال کیا گیا ہے، جس کیوجہ سے گاڑیوں کے ٹائرز خراب ہونے کے ساتھ ساتھ شہریوں کے لئے مسائل کا باعث بھی بن رہے ہیں۔

ٹرانسپورٹرز کا اس حوالے سے کہنا ہے کہ پاکستان کے علاوہ پوری دنیاء میں آئی کیٹ سٹڈز سڑکوں پر نصب کرنے پر سخت پابندی عائد ہے ، پاکستان میں سٹڈز کا استعمال فیشن بن چکا ہے ، جس کیوجہ سے گاڑی کے ٹائرز کو شدید نقصان پہنچنے کے ساتھ ساتھ ٹائرز کی الائمنٹ اور بیلنسنگ کو بھی خراب کر دیتے ہیں جو کسی بڑے حادثے کا سبب بن سکتے ہیں۔

قبل ازیں سپریم کورٹ آف پاکستان نے ان سٹڈز کی تنصیب پر پابندی عائد کررکھی ہے لیکن ملک بھر کی طرح ضلع جہلم میں ان کی تنصیب لمحہ فکریہ ہے جاننے والوں کا یہ دعویٰ بھی ہے کہ بڑی ٹائرز کمپنیان باقاعدہ ایگریمنٹ کے تحت ان کی تنصیب کرواتی ہیں تاکہ ان کو فائدہ پہنچے۔

علاقہ کے ٹرانسپورٹرز نے اعلیٰ حکام سے مطالبہ کیاہے کہ اندرون شہر سمیت جی ٹی روڈ پر نصب سٹڈز کے خاتمے کے لئے فوری اقدامات اٹھائے جائیں تاکہ گاڑیوں کے مالکان نقصان سے محفوظ رہ سکیں ۔

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button