تحریک لبیک کے خلاف ضلع جہلم میں کریک ڈاؤن جاری، رہنماؤں سمیت 83 کارکن گرفتار

0

جہلم (چوہدری سہیل عزیز+ محمد امجد بٹ) ضلع جہلم سے پولیس اور قانون نافذ کرنے والے اداروں کے مشترکہ آپریشن میں تحریک لبیک کے رہنماؤں سمیت 83کارکن گرفتار ، دفعہ 144نافذ ،درجنوں گرفتاریوں کے بعد تحریک لبیک کے کارکن خاموش، احتجاج سے گریزاں۔

تفصیلات کے مطابق تحریک لبیک کو 25 نومبر کو احتجاج سے روکنے کے لیے پارٹی کے سربراہ خادم حسین رضوی سمیت اہم رہنماؤں اشرف آصف جلالی اور پیر افضل قادری کی گرفتاری کے بعد صوبہ بھر میں تحریک لبیک کے کارکنوں کی گرفتاری کے لیے پولیس اور دیگر قانون نافذ کرنے والے اداروں نے ملکر آپریشن کیا۔

یہ خبر بھی پرھیں: تحریک لبیک کے خلاف ضلع جہلم میں کریک ڈاؤن، سرپرست اور ضلعی امیر سمیت درجنوں کارکنان گرفتار

جہلم میں بھی پولیس نے ناکے لگا کر سخت چیکنگ کا عمل جاری رکھاہواہے جہلم پولیس گرفتاریوں کے حوالہ سے چکوال پولیس سے بہت آگے ہے جہلم پولیس نے سوہاوہ، دینہ، جہلم اور پنڈدادنخان سے تحریک لبیک کے ضلعی رہنماؤں سمیت اب تک83کارکن گرفتار کیے جبکہ ابھی تک چکوال پولیس صرف 13کارکن گرفتار کر سکی،اسی طرح پنجاب بھر میں اب دفعہ 144کا بھی نفاذ کر دیاگیا ہے جس پر جہلم میں بھی سختی سے عمل درآمد کیا جارہا ہے۔

ملک بھرکی طرح ضلع جہلم میں پولیس اور دیگر قانون نافذ کرنے والے اداروں کی بھرپور چھاپہ مار مہم کے دوران درجنو ں گرفتاریوں کے بعد تحریک لبیک کے کارکن بڑی تعداد میں زیر زمین چلے گئے ہیں اور خادم رضوی کی گرفتاری کے بعد اب تک ضلع جہلم میں کسی قسم کا کوئی احتجاج دیکھنے میں نہیں آیا ، پولیس نے گزشتہ سے پیوستہ روز کارروائیوں کے بعد گزشتہ شب بھی چھاپوں کا سلسلہ جاری رکھااور کئی جگہ چھاپے مارے گئے ۔

یاد رہے کہ گزشتہ روز ضلع جہلم کی چاروں تحصیلوں سوہاوہ، دینہ، جہلم اور پنڈدادنخان میں قانون نافذ کرنے والے اداروں اور پولیس کی مشترکہ کارروائی کے دوران تحریک لبیک پاکستان کے سابق امیدوار برائے ایم پی اے سید عرفان امیر شاہ بخاری، ضلعی امیر سربراہ عاصم رضوی،قاضی وسیم، ایاز ، ضیاء الحق رضوی، رمضان افسر، مبین، شہزاد، سخاوت سمیت درجنوں کارکنوں کو حراست میں لے لیا گیا تھا۔

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.