جلالپور شریفپنڈدادنخان

جلالپور شریف کے جنگلات سے درختوں کی بے دریغ کٹائی جاری، جنگل میدانوں میں تبدیل

جلالپورشریف/پنڈدادنخان: جلالپور شریف کے جنگلات سے درختوں کی بے دریغ کٹائی جاری ، جنگل میدانوں میں تبدیل، محکمہ جنگلات کے عملے کی ملی بھگت سے جنگلات کو مولی گاجر کی طرح کاٹا جانے لگا ۔ ٹمبر مافیا نے محکمہ جنگلات کے متعلقہ ذمہ داران کے ساتھ ملکر جنگلات کی کٹائی شروع کرکے جنگلات کو میدانوں میں تبدیل کر دیا ہے ۔
تفصیلات کے مطابق جلالپور شریف کے جنگل سے روزانہ لاکھوں روپے کی قیمتی لکڑی چوری ہونے لگی موسم سرما میں لکڑی کی مانگ میں غیر معمولی اضافے کے ساتھ ہی گھنے جنگل سے لکڑی چور ٹرالیوں ، لینڈز روور سمیت شاہزور مزدا ٹرکوں پر لاد کر روزانہ ہرے بھرے درختوں کو کاٹ کر قریبی ٹال پر فروخت کر دی جاتی ہے ،محکمہ جنگلات کے افسران سب کچھ جاننے کے باوجود خاموش تماشائی کا کردار ادا کر رہے ہیں ۔ دن اور رات کے اوقات میں روزانہ کی بنیاد پرٹمبر مافیا درختوں کی کٹائی اور فروخت جاری رکھے ہوئے ہے۔
علاقہ مکینوں کا اس حوالے سے کہنا ہے کہ متعدد مرتبہ محکمہ جنگلات کے ضلعی افسران کو درختوں کی بے دریغ کٹائی اور ٹریکٹر ٹرالیوں کے ذریعے لکڑیوں کی منتقلی بارے آگاہ کیا متعلقہ افسران خود کارروائی کرنے کی بجائے مقامی ملازمین کو چوری شدہ لکڑی کی انکوائری کے لئے بھجوادیتے ہیں جس سے ظاہر ہوتا ہے کہ محکمہ جنگلات کے مقامی ملازمین اور افسران کے مابین گٹھ جوڑ ہے ۔ متعلقہ ملازمین لکڑی چوروں کے خلاف کارروائی کرنے کی بجائے پروٹوکول فراہم کرکے انہیں دیدہ دلیری کے ساتھ تحفظ فراہم کردیتے ہیں۔
علاقہ مکینوں کا کہنا ہے کہ ایک طرف وزیر اعظم پاکستان عمران خان درخت لگانے کے لئے صبح شام مہم جاری رکھے ہوئے ہیں تو دوسری جانب محکمہ جنگلات کے افسران و ملازمین کی سرپرستی میں سرسبز و شاداب درختوں کی بے دریغ کٹائی سوالیہ نشان بن چکی ہے ۔
علاقہ مکینوں نے کمشنر راولپنڈی ، ڈپٹی کمشنر جہلم سے مطالبہ کیا ہے کہ جلالپور شریف کے جنگل کا معائنہ کیا جائے اور جنگلات کو نقصان پہنچانے والے محکمہ جنگلات کے افسران وملازمین کے خلاف فوجدار ی مقدمات درج کروائے جائیں تاکہ آکسیجن فراہم کرنے والے درختوں کو محفوظ بنا کر ماحول کو آلودگی سے بچایا جا سکے۔

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button