العصر سکول سسٹم بڑاگواہ کی سالانہ پروقار اور رنگارنگ تقریب تقسیم انعامات

0

ڈومیلی: العصر سکول سسٹم بڑاگواہ کی سالانہ پروقار اور رنگارنگ تقریب تقسیم انعامات، ندیم انجم ڈائریکٹر سپرٹ سکول دینہ اور سعدیہ خان راجہ سابق صدر یوتھ ویلفیئرفاؤنڈیشن ڈومیلی نے بطور مہمان خصوصی شرکت کی۔

تفصیلات کے مطابق نجی العصر سکول سسٹم امین کیمپس بڑاگواہ میں سالانہ تقریب تقسیم انعامات کی تقریب کا انعقاد کیاگیا،تقریب کا آغاز باقائدہ طور پر تلاوت قرآن پاک سے محمد سکندر نے کیا،نعت پاک علی ارتضی نے خوبصورت آوازمیں پیش کی،چھوٹے چھوٹے بچوں نے ویلکم سانگ پر شاندار پرفامس پیش کی۔

اس تقریب میں کشمیر میں مسلمانوں پر ظلم و بربریت کے حوالے سے اور اے پی ایس کے حوالے ٹیبلوپیش کیا گئے، بچوں کی پرفامس دیکھ کر کئی والدین آبدیدہ ہوگئے، انکے ایک سوال ایک جواب کا پروگرام،بچوں کو تعلیم نہ دینے والے والدین پر ایک ڈرامہ بھی پیش کیا گیا، دونوں مہمانوں کا شاندار استقبال کیا گیا، مہمانوں کو اسوہ ناصر،عبیرہ جنت اور ذونائشہ واجد نے پھولوں کاگلدستہ کیا، بچوں کے والدین سمیت سیاسی و سماجی شخصیات نے شرکت کی۔

ندیم انجم ،سعدیہ خان راجہ ،عابد کیانی ،شیرازکیانی،چوہدری شیراز تھلہ چوہدریاں،ڈاکٹر نصرت کیانی،صوبیدار ذوالفقار،صوبیدار عبدالجبار کیانی،راجہ راؤف کیانی جنرل کونسلر،سفیرحمزہ طاہر،سر نبیل پرنسپل احسن پبلک سکول پدھری نے کامیاب بچوں میں انعامات تقسیم کئے۔

سعدیہ خان راجہ نے خطاب کرتے ہوئے کہامیں کئی سکولوں کی سالانہ تقریب میں گئی جس طرح العصر سکول میں اچھی تقریب ہوئی اور کہیں نہیں ہوئی،میں اعلان کرتی ہوں اس سکول میں یتیم اور غریب جو بچے زیر تعلیم ہیں پانچ بچوں کی فیس میں اداکروں گی، میں پرنسپل کا شکریہ اداکرتی جنہوں نے ایک پسماندہ علاقے میں اچھے سکول کا قیام لایا۔

ندیم انجم ڈائریکٹر سپرٹ سکول دینہ نے خطاب میں کہاکہ آج کل کے دور میں تعلیم بہت ضروری ہے،والدین اپنے بچوں کو اچھے سکول میں تعلیم داخل کراکر اچھی تعلیم دلوائیں،جو ہم کال پیکچ ،نیٹ پیکج پر فضول خرچی کرتے ہیں، اگر وہ والدین بچوں کی تعلیم پر خرچ کریں تو آنے والے وقت میں آپ کے یہ بچے کسی اچھی پوسٹ پر ہوں گے،پرائیویٹ سکولز دنیاوی تعلیم کیساتھ دینی تعلیم بھی دیتے ہیں،جس طرح آج کشمیر اور اے پی ایس پر ٹیبلوپیش کئے سب کے دل جیت لیئے ہیں،کچھ دنوں سے جو پاکستان اور انڈیاکے حالات خراب ہیں اسی وجوش و جذبے سریہ بچے بھی اپنے وطن کی حفاظت کیلئے تیار ہیں،”اے تو بچے لیکن جذبے بلند”‘۔

پرنسپل سفیرحمزہ نے مختصر خطاب میں کہاآج الحمداللہ یہ تقریب کامیاب رہی ،اچھے نتائج حاصل ہوئے میری پورے سال کی محنت آج چھوٹے چھوٹے بچوں نے دیکھادی ،میں تمام والدین کو مبارکباد پیش کرتا ہوں جنہوں نے اپنے بچوں پر توجہ دی اور آ ج بچوں نے کامیابی حاصل کی،میرا چیلنج ہے کہ جس طرح سٹاف ہمارے پاس موجود ہے اور کسی سکول میں نہیں ،جس طرح میں نے تین سال محنت کی اور آج وہ بچیاں کامیاب ہوکر یونیورسٹی میں تعلیم ہیں،وہاں سے تعلیم مکمل کرکے انہوں نے جب واپس آنا ہے تو انہوں نے اس علاقے میں ہی تعلیم کو عام کریں گے۔

انہوں نے کہا کہ اس بار اس سارے پروگرام کو ٹیچرز نے خود تیار کرکے بچوں کو تیار کرایاانکو میں سلوٹ کرتاہوںاور انکو خصوصی شیلڈزسے نوازاگیا ،تو والدین سے گزارش ہے کہ پلے گروپ سے لیکر ششم تک داخلہ جاری ہے ،باقی بچوں کو بھی داخل کروائیں ، اور آخر میں ہال پاکستا ن کے نعروں سے گونج اٹھا۔

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.