جہلم کے ہوٹل مالکان کھانے کی اشیاء میں ناقص، بدبوردار گھی کا سر عام استعمال، فوڈ اتھارٹی خاموش

0

جہلم: شہر و گردونواح میں ہوٹلوں اور خوانچہ فروشوں کا کھانوں میں ناقص وغیر میعاری ،گھٹیا اور بدبو دار گھی کا استعمال ، کھلی فضا ء میں موجود باورچی خانوں میں گندگی کے ڈھیر ، شہری ناقص و غیر معیار ی آلودہ کھانے ،کھانے سے بیمار ہونے لگے ، ڈسٹرکٹ فوڈ اتھارٹی کے ذمہ د اران نے خاموشی اختیار کر لی، شہریوں کا ڈسٹرکٹ فوڈ اتھارٹی کے ذمہ داران سے نوٹس لینے کا مطالبہ۔

تفصیلات کے مطابق جہلم شہر و گردونواح کے ہوٹل مالکان کھانے کی اشیاء میں ناقص ،بدبوردار گھی کا سر عام استعمال کر رہے ہیں جبکہ بس سٹاپوں و غیرہ پر گھی سے تلی اشیاء فروخت کرنے والے ان سے بھی 2 قدم آگے ہیں او ر ان کی مصنوعات میں سڑک پر اڑنے والا گردو غبار بھی شامل ہوتا ہے۔

ہوٹلوں کے باورچی خانے بھی غسل خانوں، لیٹرینوں کے ساتھ کھلی جگہ پر بنائے گئے ہیں جو صفائی نہ ہونے کی وجہ سے گندگی سے اٹے پڑے ہیں اور کھانوں کی تیاری سے لیکر برتنوں کی دھلائی تک کے سارے عمل میں صفائی یا حفظان صحت کا کوئی خیال نہیں رکھا جاتا جبکہ دوسری طرف محکمہ صحت اور دیگرمتعلقہ ادارے ہوٹل مالکان سے بھتہ لینے تک محدود ہیں۔

دوسری طرف ڈسٹرکٹ فوڈ اتھارٹی کے ذمہ داران ہوٹلوں ، بیکریوں، پکوڑے سموسے تیار کرنے والے مالکان کو چیک کرنے کی کبھی زحمت گوارہ نہیں کرتے ، جسکی وجہ سے شہری انتڑیوں اور پیٹ کی بیماریوں سمیت ہیپاٹائٹس جیسے مہلک امراض کا شکار ہو رہے ہیں۔

عوامی حلقوں نے ڈپٹی کمشنر جہلم سے مطالبہ کیاہے کہ ڈسٹرکٹ فوڈ اتھارٹی کے متعلقہ ذمہ داران کوشہر و ملحقہ آبادیوں میں قائم ہوٹلوں ، بیکریوں ، سویٹ شاپس کو چیک کرنے کا پابند بنایا جائے تاکہ شہری بیماریوں سے محفوظ رہ سکیں۔

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.