پنڈدادنخان

سول ہسپتال پنڈدادنخان کے ڈاکٹر نے ہسپتال ملازم کو گالیاں اور دھکے دے کر ہسپتال سے نکال دیا

پنڈدادنخان: تحصیل ہیڈ کوارٹر ہسپتال پنڈدادنخان کے حسنین نامی ڈاکٹر نے کلاس فورکے ملازم کو گالیاں اور دھکے دے کر ہسپتال ایمرجنسی سے نکال دیا، ڈاکٹر اور ملازم کی توں تکرار کے دوران مریض بے یارو مددگاررہے ،THQپنڈدادنخان میں گروپ بندی کے باعث ایسے واقعات ہونا معمول بن گیا،اس سے قبل HRکے خلاف بھی شکایات کی گئیں تاحال معاملہ جوں کا توں۔

تفصیلات کے مطابق THQپنڈدادنخان بد انتظامی اور مسائل کا شکار ہوگیا، مریضوں کے ساتھ ساتھ سینئرز نے ہسپتال عملہ کو بھی نہ چھوڑا۔ گزشتہ روز حسنین نامی ڈاکٹر نے اسلام نامی وارڈ سرونٹ کوگالیاں اور دھکے دے کر ہسپتال ایمرجنسی سے نکال دیا۔

ذرائع کے مطابق معاملہ کی ویڈیو سوشل میڈیا پر وائرل ہونے کے بعد ڈاکٹرز نے حسنین نامی ڈاکٹر اور اسلام نامی کلاس فور ملازم کے درمیان صلح کروا کہ معاملہ دبا دیا۔

یاد رہے کہ اس سے قبل بھی THQمیں تعینات HRجو کہ MSکی ملی بھگت سے ایڈمن کے فرائض بھی انجام دے رہا ہے کے خلاف بھی متعدد شکایات درج ہوئیں لیکن MSاور DDHOکی پشت پناہی کے باعث تاحال کوئی موثر انکوائری نہ ہوسکی جبکہ CEOہیلتھ جہلم بھی سب اچھا کی رپورٹ دینے لگے جس کے باعث سول ہسپتال پنڈدادنخان میں مریضوں اور عملہ کے ساتھ ایسے واقعات رونما ہوتے رہتے ہیں۔

عوامی سماجی حلقوں نے وزیر اعلیٰ پنجاب عثمان بزدار، وزیر ہیلتھ ڈاکٹر یاسمین راشد ،سیکرٹری ہیلتھ،سمیت اعلیٰ حکام سے استدعا کی ہے کہ ٹی ایچ کیو میں ہونے والی بد انتظامیوں کا نوٹس لیا جائے اور ذمہ داران کے خلاف محکمانہ کارروائی عمل میں لائی جائے۔

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button