جہلم کا مشہور قتل کیس؛ ملزم کو ٹرائل کورٹ کی جانب سے دی گئی سزائے موت کالعدم، ملزم بری

0

جہلم: لاہور ہائیکورٹ راولپنڈی بنچ کے جناب جسٹس محمد طارق عباسی اور جناب جسٹس راجہ شاہد محمود عباسی نے تھانہ صدر جہلم کے قتل کیس میں ملزم کو ٹرائل کورٹ کی جانب سے دی گئی سزائے موت کالعدم قرار دے کر اسے بری کردیا۔

ملزم اشتیاق احمد کے وکیل راجہ غنیم عابر خان ایڈووکیٹ نے سزاء کے خلاف دائر اپیل کی پیروی کی اور بتایا کہ 12 ستمبر2016 ء کو ملزم اشتیاق احمد نے سابقہ رنجش پر کلہاڑی کے وار سے برکت علی کو قتل کردیا تھا جس کا مقدمہ درج کرکے پولیس نے ملزم کو چالان کیا۔

ایڈیشنل سیشن جج جہلم نے 13 نومبر2016 کو مقدمہ کی سماعت کے بعد جرم ثابت ہونے پر ملزم کو سزائے موت سنا دی تھی جس کے خلاف ملزم نے اپیل دائر کی جس میں ملزم کا موقف ہے کہ پولیس نے اس پر کلہاڑی کی جعلی ریکوری ڈالی گئی تھی جبکہ جو گواہان پیش ہوئے وہ موقع واردات پر موجود نہ تھے۔

عدالت عالیہ کے ڈویژن بنچ نے دو طرفہ دلائل سننے کے بعد ملزم کی سزائے موقت ختم کرکے اسے بری کردیا۔

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.