دینہ

یوٹیلٹی سٹور پر عوامی ریلیف خواب بن گیا، اشیائے خورد ونوش کی انتہائی کمی، دستیاب اشیاء بھی واقفیت پر ملنے لگیں

دینہ:‌یوٹیلٹی سٹور پر عوامی ریلیف خواب بن گیا، اشیائے خورد ونوش کی انتہائی کمی، دستیاب اشیاء بھی واقفیت پر ملنے لگیں، عام شہری کو کوئی سہولت نہ مل سکی، کئی کئی گھنٹے لائنوں میں لگنے کے بعد سامان ختم ہو گیا کا اعلان کر دیا جاتا ہے، ضلعی انتظامیہ نے مکمل چپ سادھ لی۔

تفصیلات کے مطابق حکومت کے بلند و بانگ دعووں کی عملی حقیقت کو دیکھنا ہو تو شہر کے کسی بھی یوٹیلٹی سٹور کا دورہ کریں جہاں مارکیٹ سے صرف چند روپے کے فرق سے انتہائی ناقص اشیاء انتہائی کم مقدار میں فروخت کی جارہی ہیں ان اشیاء کو حاصل کرنے کیلئے شہریوں کو یوٹیلٹی سٹور کے عملہ کے قریبی تعلق داروں سے رابطہ کرنا پڑتا ہے یا سٹور عملہ کے رشتہ دار ہی سامان حاصل کر پاتے ہیں۔

عام شہری کئی کئی گھنٹے روزہ کی حالت میں قطارو ں میں کھڑے رہتے ہیں اور باری آنے پر سامان ختم ہو چکا ہے کا اعلان کر دیا جاتا ہے جن خوش قسمت افراد کو قطاروں میں کھڑے رہنے کے بعد سامان خریدنے کا موقع ملتا ہے ان کو وہ چیزیں بھی خریدنے پر مجبور کیا جاتا ہے جن کی ان کو ضرورت ہی نہیں ہوتی یا ان کے پاس اتنے پیسے ہی نہیں ہوتے کہ وہ غیر ضروری اشیاء خرید سکیں لیکن یوٹیلٹی سٹور کی انتظامیہ کی شرائط پوری نہ کرنے پر خالی ہاتھ واپس جانا پڑ جاتا ہے ۔

دوسری طرف حکومتی زعما آئے روز یوٹیلٹی سٹور ز پر اربو ں روپے کی سبسڈی کی کہانیاں سناتے نظر آتے ہیں جبکہ سٹورز پر دستیاب اشیاء کی سپلائی یقینی بنانے کی خاطر کوئی افسر چیکنگ کرنے کی زحمت نہیں کرتا۔

ذرائع نے بتایا کہ سٹورز پر سامان سپلائی چیکنگ کرنے والا افسر صبح 11بجے دفتر پہنچتا ہے اور ٹھیک 1بجے گھرکو روانہ ہو جاتا ہے ۔

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button