پنڈدادنخاناہم خبریں

زمین پھٹی نہ آسمان گرا، بیوی کے کہنے پر بد بخت بیٹے کا بوڑھی بیوہ ماں پر تشدد

پنڈدادنخان: زمین پھٹی نہ آسمان گرا، سسرالیوں کے کہنے پر بیٹے نے بوڑھی بیوہ ماں کو مار مار کر آدھ موا کر دیا، تشدد کے بعد آگ سے جلانے کی کوشش، بوڑھی ماں کے جسم کا کچھ حصہ جل گیا۔ تھانہ پنڈدادنخان میں پولیس اہلکار نے میرے ساتھ انتہائی بد تمیزی کی مجھے میرے بیٹے محمد رمضان سے تحفظ دیا جائے، بھاگ بھری

تفصیلات کے مطابق پنڈدادنخان کے نواحی علاقہ کسلیا ں کی رہائشی بوڑھی بیوہ بھاگ بھری نے ڈی ایس پی پنڈدادنخان کو تحریری درخواست میں کہاکہ میری بیٹی عنصر بی بی کی شادی مسمی الطاف حسین ولدلال خان سے ہوئی مورخہ 19-05-18بوقت تقریبا 5بجے الطاف حسین اُس کا والد لال خان ،بہن فوزیہ نے مجھے لاتوں اور مکوں سے زدوکوب کر کہ شدید تشدد کا نشانہ بنایا جس سے میری آنکھ پر شدید چوٹ آئی میرے بال کاٹنے اور مجھے قتل کرنے کی کوشش بھی کی۔

بھاگ بھری نے کہا کہ عنصر بی بی نے تھانہ پنڈدادنخان میں یہ درخواست دی جس کے بعد عنصر بی بی کا میڈیکل بھی ہوا جو کہ یٰسین نامی پولیس ملازم کی ملی بھگت سے معمولی قرار دیا گیا کیونکہ الطاف وغیرہ کی پشت پناہی یٰسین ہی کر رہا ہے اور یٰسین کے کہنے پر ہی تھانہ پنڈدادنخان پولیس کے اہلکاروں نے مجھ سے بدتمیزی بھی کی اور یہ کہہ کر بھیج دیا گیا کہ ساری غلطی تمہاری ہے ادھر شور نہ کرو واپس جاؤ ورنہ میں حوالات میں بند کر دوں گا۔

متاثرہ خواتین نے کہا کہ میری بیٹی کا اپنے شوہر سے جھگڑا نقد خرچی کا ہے جو کہ اس کا حق ہے، اگلے روز میری بیٹی زخمی حالت میں صبح کے وقت میرے گھر پر آئی تو میرے بدبخت بیٹے محمد رمضان نے اپنی بیو ی کے کہنے پر مجھے مارنا شروع کر دیا اور سلگتا ہوا گھی مجھ پر گرا کر جلانے کی کوشش کی جس سے میرے دنوں گٹنے جل گئے اور میں بال بال بچی۔

متاثرہ خواتین نے چیف جسٹس آف پاکستا ن ،آئی جی پنجاب ،آر پی او راولپنڈی،ڈی پی او جہلم اور ڈی ایس پی پنڈدادنخان سے استدعا کی ہے کے سارے واقعہ کی انکوائری کروا کر قانونی کاروائی کی جائے اور محمد رمضان،الطاف حسین اور لال خان کے خلاف مقدمہ درج کیا جائے ۔

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button