جہلم

کروڑوں روپے سے تیار ہونے والی واٹر سپلائی کی بڑی ٹینکیاں شہریوں کو پانی سپلائی نہ کر سکیں

جہلم: شہر میں کروڑوں روپے سے تیار ہونے والی واٹر سپلائی کی بڑی ٹینکیاں شہریوں کو پانی سپلائی نہ کر سکیں، منصوبے کو ادھورا چھوڑ دیا گیا، میونسپل کمیٹی کا پانی سٹور نہ کرنے پر لوڈ شیڈنگ کے دوران شہری پانی کی بوند بوند کو ترس جاتے ہیں ، واٹر سپلائی کے بوسیدہ پائپوں میں سیوریج کا پانی شامل ہو رہاہے ، جس سے شہری بیماریوں میں مبتلا ہو رہے ہیں۔

ان خیالات کااظہار جہلم شہر کی شہری ، سماجی ، رفاعی ، فلاحی ، مذہبی تنظیموں کے عمائدین نے اخبارنویسوں سے گفتگو کرتے ہوئے ، انہوں نے کہا کہ جہلم شہر میں کروڑوں روپے مالیت سے پانی سٹور کرنے کے لئے بڑی بڑی ٹینکیاں تعمیر کی گئیں جس پر عوام کے فنڈز کی کثیر رقم خرچ کی گئی لیکن ان واٹر ٹینکیوں کے ثمرات اہل جہلم کو نہ مل سکے ، ان ٹینکیوں کو جلد ازجلد بحال کیا جانا اور پانی کی بلاتعطل فراہمی یقینی بنائی جائے اس کے علاوہ واٹر سپلائی کے پائپوں کی معیاد ختم ہو چکی ہے ۔

پائپ بوسیدہ ہونے کیوجہ سے مختلف مقامات سے ٹوٹ پھوٹ کا شکار ہو چکے ہیں جس کیوجہ سے سیوریج کا پانی واٹر سپلائی کے پائپوں میں شامل ہوکر شہریوں کے گھروں میں فراہم کیا جارہاہے جس کے باعث متعدد شہری بیماریوں میں مبتلا ہورہے ہیں ۔شہریوں کا کہنا ہے کہ اندرون شہر واٹر سپلائی کی پائپ لائنوں کو تبدیل کیا جائے اور جگہ جگہ سے ٹوٹنے والے پائپوں کی مرمت کی جائے تاکہ شہری بیماریوں سے محفوظ رہ سکیں ۔

جہلم شہر کی شہری ، سماجی ، رفاعی ، فلاحی ، مذہبی تنظیموں کے عمائدین نے ڈپٹی کمشنر جہلم سے مطالبہ کیاہے کہ کروڑوں روپے کی لاگت سے تعمیر کی گئیں ٹینکیوں کو فعال کیا جائے تاکہ لوڈشیڈنگ کے اوقات میں پانی جیسی سہولت سے مستفید ہو سکیں ۔

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button