کالم و مضامین

طوطا۔ مینا۔ الُو اور ’’بابا نیامتا‘‘ — تحریر: محمد امجد بٹ

کوئی ضروری نہیں کہ ہر جگہ یا ہر علاقے میں کوئی ’’ بابا رحمتا‘‘ ہی انصاف دینے والا ہوتا تھا ۔ہم نے جو کہانی پڑھی اس میں ’’ بابے رحمتے ‘‘ کا کوئی ذکر مگر ایک بات ملتی جلتی ضرور ہے کہ اس کہانی میں بھی ’’ بابے ‘‘ کا کردار کلیدی ہے ۔پتہ نہیں کیوں جب یہ کہانی لکھ رہا تھا تو دوستوں نے ’’ بابے ‘‘ کے ذکر سے منع کر دیا ۔میں نے ان نا ہنجاروں کو سمجھایا کہ ’’ بابوں ‘‘ کے بغیر کہانیاں تو درکنار گھر بھی ادھورے اور ویران لگتے ہیں ۔

ارے بابا ! چھوڑو ان باتوں کو چلو کہانی پڑھو
طوطا اور مینا پرواز کر کے گئے ۔انہوں نے پرواز کی تھکن مٹانے کے لئے تھوڑی دیرسستانے کا ارادہ کیا ۔اور ایک درخت پر بیٹھ گئے۔طوطا اور مینا جس درخت پر بیٹھے اس کے آس پاس کا علاقہ ویران اور کھنڈر بن چکا تھا۔وہ آپس میں اس بستی کے اجڑنے اور کھنڈر بننے کے بارے میں گفتگو کرنے لگے۔یہ بستی کیسے اجڑی ہو گی۔وہ بہت سے امور زیرِ بحث لائے ۔کبھی سوچا یہاں بم دھماکے ہوئے ہوں گے۔۔۔۔۔۔کبھی سوچاکہ کسی موذی وبائی مرض کا شکار ہو کر اس بستی کے لوگ مر گئے ہوں گے ۔۔۔۔۔۔۔۔ کبھی ان کی سوچ کے دھارے میں آیا کہ اس بستی کو سیلاب نے کھنڈر بنا دیا ہو گا۔۔۔۔۔۔۔کبھی ان کے ذہن میں اس بستی کا اجاڑ زلزلے کا سبب بنا۔۔۔۔۔الغرض وہ اپنی پرواز کی تھکن مٹانے کے ساتھ ساتھ اس بستی کے اجڑنے کے اسباب سوچتے رہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ بلاآخر انہوں نے پرواز بھرنے کی تیاری کی اور بستی کے اجڑنے کی بحث کو سمیٹے ہوئے کہا کہ ضرور اس بستی میں الوّ کا بسیرا ہو گا جسکے نحوست سے یہ بستی اجڑ گئی ہے۔۔۔۔۔۔ انکی یہ تمام گفتگو انکے اوپر کی ٹہنی پہ بیٹھا الوّ بھی سن رہا تھا۔۔۔۔۔۔ جوں ہی انہوں نے پرواز بھرنے کی کوشش کی تو الوّ فوراً انکے پرواز کے آڑے آ گیا۔ الوّ نے آتے ہی مینا کو قابو کر لیا۔۔۔۔۔۔۔ الوّکی یہ حرکت طوطے کو ناگوار گذری ۔طوطے نے الوّ سے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

یہ کیا طوفانِ بد تمیزی ہے ؟؟؟؟؟؟؟؟؟؟؟؟؟؟؟؟تم نے میری بیوی کا ہاتھ کیوں پکڑا؟؟؟؟؟؟؟؟ الوّ طوطے کی بات کو ٹوکتے ہوئے بولا۔۔۔۔۔۔بیوی؟؟؟؟؟؟ کس کی بیوی؟؟؟؟؟؟ او جا جا اپنا کام کر یہ تیری نہیں میری بیوی ہے۔۔۔۔۔۔۔۔الوّ کے اس دلیرانے جواب اور روّیے نے طوطے کے اوسان خطا کر دیے۔طوطے نے الوّ کے سامنے بے بس ہوتے ہوئے انصاف کے حصول کے لئے دہلیزِ انصاف پر دستک دینے کا فیصلہ کر لیا ۔ طوطا اپنا کیس لے کر قریبی بستی کے ایک منجھے ہوئے منصف ’’ بابے نیامتے ‘‘ جسے بستی کے لوگ ’’ بابا نیامتا ‘‘ کے نام سے پکارتے تھے کے پاس پہنچ گیا۔ بس کیا تھا۔۔۔۔۔ بابا نیامتا نے فوری انصاف دینے کے لئے الو کو بلا بھیجا اور ا پنی پنجائیت میں طلب کر لیا۔الوّ نے اطلاع ملنے پر اپنے قانونی مشیروںسے صلاح مشورے کئے او ر بابانیامتاکی پنجائیت میں پہنچ گیا۔ پنجائیت میں انصاف کے تقاضے پورے کرنے کے لئے طوطے اور مینا کے قانونی مشیروں نے دلائل دینا شروع کر دیے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فیصلے کی گھڑی آن پہنچی۔۔۔۔۔۔۔۔۔طوطا انصاف کے حصول کے لئے پر امید تھا۔۔۔۔۔۔۔۔ الوّ بھی زنجیرِ عدل ہلانے کے بعد مطمئن نظر آ رہا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ یکدم آواز آئی ۔۔۔۔۔۔۔۔ طوطا،،،، الوّ حاضر ہوں۔۔۔۔۔۔۔ دونوں انصاف کے لئے پر امید اندر چلے گئے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ با بے نیامتے نے پوچھا کیا دونوں فریقین حاضر ہیں ؟؟؟؟؟؟؟؟ جواب ملا حضور حاضر ہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔ بابے نیامتے نے انصاف نامہ پڑھنا شروع کیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ہم نے دونوں فریقین کے قانونی مشیروں کے دلائل سنے۔۔۔۔۔۔۔ اب انصاف کے تقاضے پورے کیے جاتے ہیں۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔ بحث و دلائل کے بعدصاحبِ انصاف اس نتیجے پہ پہنچے ہیں کہ مینا طوطے کی نہیں بلکہ الوّ کی بیوی ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اور طوطے کو حکم دیا جاتا ہے کہ وہ آئندہ الوّ کو تنگ نہ کرے ۔۔۔۔۔۔۔

یہ فیصلہ سنتے ہی طوطا پنجائیت کے سامنے گر گیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔ الوّ نے اس کو سہارا دیتے ہوئے کہا طوطے میاں کیا ہوا؟؟؟؟؟؟؟؟؟؟؟؟؟؟ طوطے نے کہا الوّ یار توتو جانتا ہے کہ مینا تیری بیوی نہیں بلکہ میری بیوی ہے۔ اسکا رنگ ،نسل،حسب نسب میرے ساتھ ملتا ہے۔۔۔۔۔۔ پھر تو نے یہ ظلم کیوں کیا؟؟؟؟؟؟؟؟؟؟ الوّ نے کہا کہ بیشک یہ تیری بیوی ہے۔۔۔۔۔۔ مگر ایک بات یاد رکھ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ بستیاں نہ زلزلوں ، نہ بم دھماکوں،نہ سیلابوں ، نہ موذی وباوئں کے پھیلنے سے اور نہ الوّوں کے بسیروں سے اجڑتی ہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔ بستیاں تو تب اجڑتی ہیں جب ’’ بابے نیامتے‘‘ جیسے لوگ ایسے فیصلے کرتے ہیں۔۔۔۔۔۔۔۔
کہانی اور اسکے کرداروںکی حالات سے مماثلت محض اتفاقیہ ہو سکتی ہے
کہانی ختم م م م م م م م م

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button