تبدیلی سوشل میڈیا پر نہیں بلکہ عوام میں جا کر لائی جاتی ہے۔ نوابزادہ مطلوب مہدی

0

پنڈدادنخان: کھیوڑہ میں بڑا سیاسی دھماکہ، چیئرمین گروپ کے لیڈر سابق امیدوار صوبائی اسمبلی ملک عرفان اعجاز نے کونسلرز کی اکثریت اور بڑی برادریوں کے سرکردہ رہنماؤں کے ساتھ مسلم لیگ ن کی مکمل حمایت کا اعلان کر دیا۔ہم نے ایمانداری اور شرافت کی سیاست کو فروغ دیاہے،آج عوام کا جوش و جذبہ دیکھ کر باری تعالیٰ کا شکر گزار ہوں۔راجہ مطلوب مہدی خان

تفصیلات کے مطابق ماضی میں ضلع جہلم میں کھیوڑہ مسلم لیگ ن کا گڑھ رہا اور ترقیاتی کاموں کی سست روی کی وجہ سے یہاں کے مسلم لیگ ن کے رہنما اور ورکر ضمنی الیکشن میں ناراض تھے لیکن بلدیاتی الیکشن میں مسلم لیگ ن کے نوجوان رہنما ملک عرفان اعجاز کی قیادت میں یہاں سے مسلم لیگ نے کلین سویپ کیا ہوا ہے اور ملک عرفان اعجاز صوبائی اسمبلی کے امیدوار تھے لیکن پارٹی نے ٹکٹ نہ دیا جس کی وجہ سے پورے شہر میں غم و غصہ پایا جا رہا تھا کہ ان کو تمام سیاسی پارٹیوں کی حمایت حاصل تھی۔

گزشتہ شب انھوں نے اپنے تمام د ھڑے اور کونسلرز کی اکثریت کے ساتھ اپنے ڈیرے پر ایک بہت بڑے اجتماع میں نواب زادہ مطلوب مہدی امیدوارNA-67 اور صوبائی اسمبلی کے امیدوار چوہدری ناصر لِلہ کی موجودگی میں الیکشن میں فعال کردار ادا کرنے اور مسلم لیگ ن کی بھر پور الیکشن مہم کا اعلان ڈھول کی تھاپ پر کیا۔

اس موقع پر تمام بڑی بڑی برادریوں کے رہنماؤں اور مسیحی برادری کی طرف سے ضلع کونسل کے ممبر ظفر گل اور یوسف نازنے مسلم لیگ ن کی حمایت کا اعلان کیا۔

مسلم لیگ ن یوتھ کے صدر ملک شاہین کی قیادت میں نوجوانوں نے ایک بہت بڑی ریلی میں محلہ جوتانیہ میں سادات برادری کی تقریب میں شرکت کی یہاں ان کا بھر پور استقبال کونسلر ملک قمر جوتانیہ نے کیا۔

سادات برادری کی طرف سے در بار محبت شاہ بخاری کے سید قاسم شاہ بخاری،سید سبطین شاہ بخاری، سید اشفاق شاہ بخاری اور ان کی تمام برادری نے مسلم لیگ کی مکمل حمایت کا اعلان کیا ۔دونوں تقریب سے سابق چیئر مین ملک مصدیق اسلم،مسلم لیگ نکے ضلعی نائب صدر محمد نذیر بھٹی،سٹی صدر ملک زاہد،ملک عرفان سبحانی اور بہت سے مقررین نے خطاب کیا۔

راجہ مطلوب مہدی خان امیدوارNA-67 نے اپنے خطاب میں کہا کہ کھیوڑہ میں عوام کو جوش و خروش دیکھ کر اللہ تعالیٰ کا شکر ادا کرتا ہوں اور کھیوڑہ کے عوام کا مشکور ہوں کے وہ مسلم لیگ ن سے بے حد محبت کرتے ہیں فیس بک پر تبدیلی لانے والوں کو بتا دینا چاہتا ہوں کے تبدیلی سوشل میڈیا پر نہیں بلکہ عوام میں جا کر لائی جاتی ہے ۔

Advertisement

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.