جہلم میں طالبات پر تشدد کی شکایت کرنے پر7 طالبات کو سکول سے فارغ کر دیا گیا

0

جہلم: گورنمنٹ گرلز ایلیمنٹری سکول کالا گوجراں میں انوکھا قانون، اساتذہ کا بچوں پر ظالمانہ تشدد ، حکام کو شکایت لگانے پر سات بچیاں سکو ل سے فارغ، ظالم ٹیچرز بازووں سے معذور طالبہ کو بھی تشدد کا نشانہ بناتی رہیں، سی او ایجوکیشن ، ڈی او ایجوکیشن لمبی تان کر سو گئے، شہریوں کا شدید احتجاج، تشد د کرنے والی استانیوں کو نوکری سے فارغ کرنے کا مطالبہ۔

تفصیلات کے مطابق گورنمنٹ گرلز ایلمینٹری سکول کالا گوجراں میں استانیوں نے جلاد کا روپ دھار لیا ہے اور معصوم بچیوں کو شدید تشدد کا نشانہ بنانا معمول بن گیا ، اس حوالے سے چار بچیوں کے والد عمران نے ڈی سی جہلم کو دی گئی درخواست میں موقف اختیار کیا کہ اگست کے ماہ میں سکول چھٹی کے بعدمیری بچیوں کے جسم پر زخموں اور تشدد کا نشان دیکھ کر باز پرس کی تو بچیوں نے بتایا کہ ٹیچرز نے تشدد کیا ہے۔

تشدد کے خلاف اعلی حکام کو شکایت کی گئی لیکن حسب سابق سی او ایجوکیشن اور ڈی او ایجوکیشن کی آنکھ نہ کھلی اور بچیوں کو تشدد کا نشانہ بنانے والی اساتذہ کے خلاف کوئی ایکشن نہ ہوا، جس کے بعد سکول انتظامیہ نے ملی بھگت سے میری بچیوں سمیت سات طالبات کو شکایت لگانے کے جرم میں سکول سے نکال دیا ہے اس واقعہ میں افسوسناک پہلو یہ ہے کہ ظالم جلاد استانیوں نے بازووں سے معذور بچی کو بھی کئی مرتبہ تشدد کا نشانہ بنایا اور اس کو بھی سکول سے نکال دیا۔

شہریوں نے اس واقعہ پر شدید احتجاج کرتے ہوئے وزیر تعلیم پنجاب اور کمشنر راولپنڈی سمیت اعلی حکام سے فوری نوٹس لے کر ظلم کرنے والی استانیوں کو فوری طور پر نوکری سے فارغ کرنے اور طالبات کو دوبارہ سکول میں داخل کرنے کا مطالبہ کیا ہے ۔

Advertisement

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.